MMA 47

ایم ایم اے کا سیاسی پاور شو

اسلام آباد: مذہبی سیاسی جماعتوں کے بحال ہونے والے اتحاد متحدہ مجلس عمل نے فرقہ ورانہ اختلاف بالائے طاق رکھ کر سکیولر قوتوں کو شکست دینے اور ملکی نظریاتی حدود کا دفاع کرنے کا اعلان کیا ہے۔

ایم ایم اے کا کہناہےکہ ملک دو لخت کرنے والے سیاہ و سفید کے مالکوں کو آئندہ الیکشن میں مذہبی ووٹ کے اتحاد سے شکست دی جائے گی ، آئینی اور قانونی راہ پر چل کر سود والے معاشی نظام کو ختم کیا جائے گا۔

ایم ایم اے بحالی کے بعد پہلے ورکرز کنونشن میں اتحاد کے قائدین نے عہد کیا کہ الیکشن میں مذہبی ووٹ تقسیم نہیں ہونے دیں گے ، اتحاد کے صدر مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ ایم ایم اے ملکی تاریخ کا سب سے بڑا جلسہ تیرہ مئی کو کرے گی اور مینار پاکستان پر ناچ گانے کرنے والوں کو دکھائیں گے کہ جلسہ کیا ہوتا ہے۔

انہوں نے ایم ایم اے سے الگ رہنے والے مولانا سمیع الحق پر تنقید بھی کی اور کہاکہ آج ملکی سیاست ، پارلیمنٹ ، دفاع اور معیشت سب بیرونی دباؤ میں ہیں ، ایم ایم اے ہی ملک کو بحران سے نکال سکتی ہے ۔

امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے کہا کہ ووٹ کو عزت دینے کی بات کرنے والوں نے کیا خود کبھی ووٹر کو عزت دی ، ایم ایم اے ترکی کی طرح یہاں بھی عالمی اسٹیبلشمنٹ کے مہروں کو شکست دے گی ، ملک لوٹنے والے حرم جاکر چھپ گئے تو بھی انہیں وہاں سے نکال لائیں گے ۔

علامہ ساجد میر نے کہا کوئی واشنگٹن اور کوئی بیجنگ ، ماسکو کا راستہ دکھاتا ہے لیکن ہماری منزل مکہ اور مدینہ ہے،علامہ ساجد نقوی کا کہناتھاکہ ایم ایم اے کا پیغام عوام تک پہنچ گیا تو آئندہ وزیر اعظم اس اتحاد کا ہی ہوگا

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں